ذرا سی دیر
Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi (Arshi), Karachi

یوں بھی ملنے ملانے میں ذرا سی دیر لگتی ہے
یہاں سے آنے جانے میں ذرا سی دیر لگتی ہے

ندامت ہو اگر تم کو تو رب سے پھر کرو باتیں
جہاں سر کو جھکانے میں ذرا سی دیر لگتی ہے

گزر جاتی ہیں عمریں ایک گھر تعمیر کرنے میں
مگر اس کو گرانے میں ذرا سی دیر لگتی ہے

بہت دشوار ہے دل میں کسی کو یوں بسا لینا
نظر سے پھر گرانے میں ذرا سی دیر لگتی ہے

بہت سا درد ہوتا ہے مجھے خود کو رلانے میں
یہاں ہنسنے ہنسانے میں ذرا سی دیر لگتی ہے
 

Rate it: Views: 13 Post Comments
 PREV More Poetry NEXT 
 More General Poetry View all
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 03 Jan, 2019
About the Author: Muhammad Arshad Qureshi

My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More

Visit 157 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.