دو غزلہ

Poet: Wasim Ahmad Moghal
By: Wasim Ahmad Moghal, Lahore

بجے گی چین کی ہر روز بانسری ۔۔۔۔۔۔جاناں
رہے جو ساتھ مرے تیری راگنی۔۔۔۔ جاناں
پلا رہا ہے کوئی جامِ بے خودی۔۔۔۔۔جاناں
میں ہوش میں نہیں آؤں گا اب کبھی ۔۔جاناں
لگا رہا ہے یہ سینے میں آگ سی۔۔۔۔۔جاناں
اگرچہ لہجہ تمہارا ہے شبنمی۔۔۔۔۔۔جاناں
تمہاری یاد سے روشن ہے۔ اپنی شامِ فراق
تمہارے پیار کی اب تک ہے چاندنی جاناں
تمہاری یاد سے مہکا ہے ۔۔۔۔۔گلشنِ ہستی
صبا سے ملتی ہے پھولوں کو تازگی۔۔۔ جاناں
اسی سے ہوتا ہے دل سرخرو۔۔۔۔ محبّت میں
عجیب چیز ہے دل کی شکستگی ۔۔۔۔۔جاناں
اب اسکے بعد بھی کچھ چاہئے تمہیں۔۔، تو کہو
تمہارے نام لگا دی ہے زندگی ۔۔۔۔جاناں
ہمیں زمانے کی نظروں سے بچ کے رہنا ہے
یہ لوگ باتیں سمجھتے ہیں ان کہی ۔،،۔جاناں
جبینِ نازبھی تیری ہے۔،،،،۔مطلعِ انوار
یہاں پہ ہوتی ہے اِک تیز روشنی۔۔۔جاناں
یہ روز چاند نکلتا ہے۔۔۔۔۔۔دیکھنے تم کو
یاں روز شکل بناتا ہے وہ نئی ۔۔۔جاناں
یہ کہکشاں بھی تو رہتی ہے تیرے قدموں میں
طواف کرتے ہیں جھرمٹ یہاں کئی جاناں
ملی ہوئی ہے مرے دشمنوں سے۔۔۔ بدِ صبا
اُڑا کے لے گئی غز لیں مری سبھی۔ جاناں
اگر پسند نہ آئے۔۔۔۔۔۔۔ تو درگزر کرنا
غزل کہی ہے ترے واسطے۔۔ نئی جاناں
جو شاعری کیا کرتا تھا۔۔خاص تیرےلئے
وہ شاعری مری پہچان بن گئی ۔۔۔جاناں
اگر ملے کبھی فرصت تو مجھ سے ۔۔مل لینا
کہ دکھ بھری ہے مری داستان بھی جاناں
،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،
جو تُو نہیں ہے تو دل میں ہے بے کلی۔۔۔۔۔ جاناں
تمہارے دم سے ہے اپنی تو ہر خوشی ۔۔۔۔۔جاناں
نہ دوستی ہے کسی سے نہ دُشمنی ۔۔۔۔۔۔۔۔جاناں
میں اپنے شہر میں لگتا ہوں اَجنبی ۔۔۔۔۔۔۔جاناں؎
سنو تو جس کی ہے مشہور نازکی۔۔۔۔۔۔۔ جاناں
دکھائے کیسے وہ وعدے کی پختگی ۔۔۔۔۔۔۔جاناں
بجا رہا ہوں محبّت کی بانسری۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاناں
کیا نہ چھیڑو گے تم اپنی راگنی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاناں
عطا ہو جس کو محبّت کی چاندنی۔۔۔۔۔۔۔۔جاناں
بجائے چین کی کیوں کر نہ بانسری ۔۔۔۔۔۔۔جاناں
ہماری آنکھوں میں رہتی ہے بس نمی۔۔۔۔۔جاناں
نجانے رہ گئی دنیا میں کیا کمی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاناں
یقیں نہ آئے تو خود آ کے دیکھ لے۔۔۔۔۔۔۔ ان کو
وہ ہی ہے زخموں پہ پہلی سی تازگی۔۔۔۔۔۔۔جاناں
تمام جسم میں چبھتی ہیں کرچیاں۔۔۔۔۔۔۔۔ دل کی
تمہارے لب کی جو دیکھی ہے پنکھڑی ۔۔۔۔جاناں
تمہاری آنکھوں نے۔۔۔۔۔۔گمراہ کر دیا ہے مجھے
تمہارے ذمے ہے اب میری رہبری ۔۔۔۔جاناں
تمہاری زلفیں تو زنجیر بن گئیں۔۔۔۔۔۔۔ میری
تمہاری زُلفیں اگرچہ ہیں ریشمی۔۔۔۔۔۔۔جاناں
تمہارے عشق نے پاگل سا کر دیا ہے۔۔۔۔۔ مجھے
اب آکے دیکھ تو لے میری بے بسی۔۔۔۔جاناں
عجیب چیز ہے تیرا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ شربتِ دیدار
میں جوں جوں پیتا ہوں بڑھتی ہے تشنگی ۔۔۔جاناں
جو پھول ہیں سو وہ تیرے ہیں ۔۔۔خار ہیں میرے
اِ سی کا نام ہے دنیا میں عاشقی ۔۔۔۔۔۔۔۔جاناں
سُلگ رہا ہوں محبّت کی آگ میں۔۔۔۔۔ تنہا
کہاں گیا وہ ترا عہدِ دلبری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاناں
وہ جس پہ گزری نہیں ہے ۔۔۔۔۔وہ خاک سمجھے گا
فریب خوردہ دلوں کی شکِستگی ۔۔۔۔۔۔۔۔جاناں
وہ ساتھ لائی تھی اپنے قیامتیں ۔۔۔۔۔۔۔۔کیاکیا
شبِ فراق جو ہم پر گزر گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاناں
ہمارے ساتھ ہمیشہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔جومسکراتی تھی
وہ ہی تو روتی ہے اب ہم پہ چاندنی ،،،،،،جاناں
کہ زندگی میں مری پھر سے جان۔۔۔۔ پڑ جائے
تُودیکھ لے مجھے اِک بار سر سری۔۔۔۔۔۔ جاناں
زمانے بھر کی مجھے تیرگی سے۔۔۔۔۔۔۔ لڑنا ہے
ملے گی کب ترےچہرے کی روشنی ۔۔۔جاناں
مٹا ے جو مرے سینے کی۔۔۔۔۔ تلخیاں ساری
وہ گفتگو کرو مجھ سے بھی رس بھری۔۔۔۔ جاناں
اسی نے آگ لگائی ہے میرے ۔۔۔۔۔۔سینے میں
جسے سمجھتارہامیں ہے دل لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔جاناں
بہا کے لے گئی کتنی ہی بستیاں۔۔۔۔۔۔۔ دل کی
چڑھی ہوئی مری آنکھوں میں یہ۔۔ ندی جاناں
اُٹھا کے پھینک نہ آئے مجھے بھی۔۔۔۔۔صحرا میں
ہوائے عشق تو ہوتی ہے سَرپِھری۔۔۔۔۔ جاناں
بجھا نہ دے کہیں امید کے۔۔۔۔۔۔۔ چراغوں کو
ہوائے درد چلی ہے اَبھی اَبھی ۔۔۔۔۔۔۔جاناں
رہوں گا کیسے میں خلدِ بریں کے ۔۔۔باغوں میں
نظر نہ آئی جو صورت وہاں تری۔۔۔۔۔۔ جاناں
تمہارا حسن میں شعروں میں کیوں بیاں نہ کروں
تمام فیض ہےتیرا یہ شاعری۔۔۔۔۔۔۔ جاناں
جو زیرِ لب ہے تبسّم۔۔۔۔۔۔ وہ اور ہی کچھ ہے
گلوں کی دیکھی ہے ہم نے شگُفتگی۔۔۔۔۔ جاناں
یہ پھول جھانکتے رہتے ہیں میرے ۔کمرے میں
یہاں سے آتی ہے خوشبو تری ابھی ۔۔۔جاناں
فلک پہ دیکھا تو ۔۔۔۔۔۔۔۔قوسِ قزح نظر آئی
لئے ہوئے تھی وہ آنچل ترے کئی ۔۔۔۔جاناں
یہ تارے روز نکلتے ہیں۔۔۔۔۔۔ دیکھنے کے لئے
لبوں پہ چاند نی جیسی تری ہنسی۔۔۔۔۔۔ جاناں
یہاں پہ چومنے آتی ہیں۔۔۔۔۔۔۔ تتلیاں اِس کو
سجا کے رکھی ہے تصویر جو تری۔۔۔۔۔۔ جاناں
یہ چاند بھی ہے پریشان۔۔۔۔۔۔۔ دیکھ کر تم کو
ہوئی توجاتی ہے اب ماند چاندنی۔۔۔۔۔ جاناں
مجھے تو بادِ صبا سے ۔۔۔۔۔۔۔۔ہوا ہے یہ معلوم
تمہارے گھر کا پتہ اور تری گلی ۔۔۔۔۔۔جاناں
میں روز اُٹھتا ہوں یہ سوچ کر۔۔ ترےدر سے
کہ لوٹ کرنہیں آؤں گا اب کبھی۔۔۔۔ جاناں
مجھے تو رہنا ہے ہر حال میں ۔۔۔۔۔ترے در پر
کہ عشق میں نہیں ہوتی ہے واپسی۔۔۔۔ جاناں
اسے اُمید ہے تُو ترس ۔۔۔۔کھائے گا اِک دن
ہمارے دل کی بھی دیکھو یہ سادگی ۔۔۔۔جاناں
تمہاری یاد کی مستی میں غرق۔۔۔۔۔ رہتا ہوں
بغیر جام کے ہوتی ہے مے کشی۔۔۔۔۔۔۔ جاناں
نجانے کونسی سوچوں میں گُم ہوا ہے ۔۔۔وسیم
سمجھتے ہیں اُسے اَب لوگ فلسفی۔۔۔۔۔۔ جاناں



 

Rate it:
Views: 38

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

Email
10 Jan, 2019
About the Author: Wasim Ahmad Moghal
Visit 152 Other Poetries by Wasim Ahmad Moghal »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

محترمہ عظمیٰ صاحبہ
جس شاندار طریقے سے آپ نے دو غزل کو سراہا ہے میں اُس جواب کے میں کچھ لکھنے سے اپنے کو عاجز پاتا ہے. میرے لئے آپ جیسے سخن ور کی طرف سے یہ تعریفی کلمات میرے لئے بہت بڑے اعزاز کی بات ہے اور میرے لئے آپ کے الفاظ ایک سند کا درجہ رکھتے جنہیں میں فخر سے دوسروں کو دِکھا سکتا ہوں.
آپ جہاں رہیں خوش رہیں اور مزید یہ کہ
ہے میرے جی میں کوئی نہ اب کلام کروں
سوائے اِس کے اُٹھ کر تمہیں سلا م کروں
آپ کا مخلص،،،،،،،،،،،،،،،،وسیم

By: Wasim Ahmad Moghal, Lahore on Jan, 21 2019

اس کلام پہ اب کیا کلام کریں
کونسا کلام ا٫س کلام کے نام کریں
سمجھ نہیں آتا کوہاں سے الفاظ تراشے جائیں آپ کی اس دوغزلہ شاعری کی شان میں قصیدہ کہنے کوآپ اپنے بہت کمال روانی تسلسل ترنم خیال آرائی حسن و نزاکت اور نہ جانے کیا کیا کیفیات و جزبات کی کہانی بیان کرگئے اپنے دِل کی روانی میں بہتے بہتے
بہت خوب بہت ہی خوب لطف آگیا
خوش رہیں اور آمانِ سخن پہ لفظوں کے ستاروں کی روشنی بکھیرت رہیں

By: uzma, Lahore on Jan, 11 2019

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City