ہم اس فضا میں اپنی صدا چھوڑ دیتے ہیں
Poet: اسلم صابر
By: Aslam sabir, Mianwali

ہم اس فضا میں اپنی صدا چھوڑ دیتے ہیں
اور کون ہے مرا تو بتا چھوڑ دیتے ہیں

تم لوٹنے کا وعدہ کرو تو سہی ذرا
ہم تیرے راستے میں دیا چھوڑ دیتے ہیں

مٹی میں پاتا ہے نمو جب عشق اور وفا
پتھر کے جیسے لوگ وفا چھوڑ دیتے ہیں

تم دیکھتے نہیں ہو دھواں اٹھتا ہے جو بھی
یہ زہر سے بھری ہے ہوا چھوڑ دیتے ہیں

مطلب تلک ہے بغض کی یاری زمانے میں
سوکھے شجر کو گرتا ہوا چھوڑ دیتے ہیں

Rate it: Views: 6 Post Comments
 PREV More Poetry NEXT 
 More Love / Romantic Poetry View all
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 08 Feb, 2019
About the Author: Aslam sabir

Visit 2 Other Poetries by Aslam sabir »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.