عشق کو ترک جنوں سے کیا غرض

Poet: Altaf Hussain Hali
By: ibtisam, khi

عشق کو ترک جنوں سے کیا غرض
چرخ گرداں کو سکوں سے کیا غرض

دل میں ہے اے خضر گر صدق طلب
راہرو کو رہنموں سے کیا غرض

حاجیو ہے ہم کو گھر والے سے کام
گھر کے محراب و ستوں سے کیا غرض

گنگنا کر آپ رو پڑتے ہیں جو
ان کو چنگ و ارغنوں سے کیا غرض

نیک کہنا نیک جس کو دیکھنا
ہم کو تفتیش دروں سے کیا غرض

دوست ہیں جب زخم دل سے بے خبر
ان کو اپنے اشک خوں سے کیا غرض

عشق سے ہے مجتنب زاہد عبث
شیر کو صید زبوں سے کیا غرض

کر چکا جب شیخ تسخیر قلوب
اب اسے دنیائے دوں سے کیا غرض

آئے ہو حالیؔ پئے تسلیم یاں
آپ کو چون و چگوں سے کیا غرض

 

Rate it:
19 Mar, 2019

More Altaf Hussain Hali Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City