وہی ہے وحشت وہی ہے نفرت آخر اس کا کیا ہے سبب

Poet: Ali Sardar Jafri
By: imad, khi

وہی ہے وحشت وہی ہے نفرت آخر اس کا کیا ہے سبب
انساں انساں بہت رٹا ہے انساں انساں بنے گا کب

وید اپنیشد پرزے پرزے گیتا قرآں ورق ورق
رام و کرشن و گوتم و یزداں زخم رسیدہ سب کے سب

اب تک ایسا ملا نہ کوئی دل کی پیاس بجھاتا جو
یوں میخانہ چشم بہت ہیں بہت ہیں یوں تو ساقی لب

جس کی تیغ ہے دنیا اس کی جس کی لاٹھی اس کی بھینس
سب قاتل ہیں سب مقتول ہیں سب مظلوم ہیں ظالم سب

خنجر خنجر قاتل ابرو دلبر ہاتھ مسیحا ہونٹ
لہو لہو ہے شام تمنا آنسو آنسو صبح طرب

دیکھیں دن پھرتے ہیں کب تک دیکھیں پھر کب ملتے ہیں
دل سے دل آنکھوں سے آنکھیں ہاتھ سے ہاتھ اور لب سے لب

زخمی سرحد زخمی قومیں زخمی انساں زخمی ملک
حرف حق کی صلیب اٹھائے کوئی مسیح تو آئے اب

Rate it:
24 May, 2019

More Ali Sardar Jafri Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City