ابھی ساز دل میں ترانے بہت ہیں
Poet: Naushad Ali
By: aslam, khi

ابھی ساز دل میں ترانے بہت ہیں
ابھی زندگی کے بہانے بہت ہیں

یہ دنیا حقیقت کی قائل نہیں ہے
فسانے سناؤ فسانے بہت ہیں

ترے در کے باہر بھی دنیا پڑی ہے
کہیں جا رہیں گے ٹھکانے بہت ہیں

مرا اک نشیمن جلا بھی تو کیا ہے
چمن میں ابھی آشیانے بہت ہیں

نئے گیت پیدا ہوئے ہیں انہیں سے
جو پرسوز نغمے پرانے بہت ہیں

در غیر پر بھیک مانگو نہ فن کی
جب اپنے ہی گھر میں خزانے بہت ہیں

ہیں دن بدمذاقی کے نوشادؔ لیکن
ابھی تیرے فن کے دوانے بہت ہیں
 

Rate it: Views: 25 Post Comments
 PREV More Poetry NEXT 
 More Naushad Ali Poetry View all
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 02 Aug, 2017
About the Author: Owais Mirza

Visit Other Poetries by Owais Mirza »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
This is such a good page for poetries. I am a fond of poetries and on
this pagei find every kind of poetry.
By: Sikandar, Lahore on Feb, 11 2019
Reply Reply to this Comment
Naushad Ali poetries shows the fun of Mizah Nigari, various of poetries by Naushad Ali I read in which my most favorite is 'Abhi Saaz Dil Me Taranay Buhut Hain' because it is easy to understand.
By: iqbal, khi on Aug, 02 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.