معلوم ہے رستہ بھی تِرا اور تِری خُو بھی
Poet: ابنِ منیب
By: ابنِ مُنیب, سویڈن

(جناب آفتاب مضطر کی زمین میں چند اشعار۔۔۔)

معلوم ہے رستہ بھی تِرا اور تِری خُو بھی
بگڑا ہوں تِری راہ سے، بھٹکا تو نہیں ہوں

کرتا ہے جو صد لخت بیَک جنبشِ خامہ
اے کاتبِ تقدیر کھلونا تو نہیں ہوں

اُٹّھے ہے جنازہ ہے مِرا بزم سے تیری
میں آپ تِری بزم سے اُٹّھا تو نہیں ہوں

سِیتا ہوں جو کانٹوں سے کُھلے زخم تو کیا غم
منت کشِ احسانِ مسیحا تو نہیں ہوں

ہر شخص مجھے روند کے گزرے ہے اِلٰہی
احساس کا پیکر ہوں مَیں رَستہ تو نہیں ہوں

Rate it: Views: 29 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 16 Sep, 2017
About the Author: Ibnay Muneeb

https://www.facebook.com/Ibnay.Muneeb.. View More

Visit 129 Other Poetries by Ibnay Muneeb »
 Reviews & Comments
also nice one of this Ghazal
hr shakhs mujhy rond k guzray hai Elahi
ehsas ka paikar hun main rasta tau nahi hun
By: uzma, Lahore on Sep, 17 2017
Reply Reply to this Comment
karta hai jo sadd lakht bayak junbish e khama
Aye katib e taqdeer khilona tau nahi hun
lajawab zbrdast dil ko chhua he nahi dil mein ja pewast hua ye shair
keep it up more and more
By: uzma, Lahore on Sep, 17 2017
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.