شناسائی
Poet:
By: Mona Shehzad, Calgary

میری جس دن سے اس سے شناسائی ہوئی ہے
اس دن سے خود سے آگاہی ہوئی ہے

میں ہر گام پلٹ کر اس کو ہی دیکھتی ہوں
گر اس ظالم کی عاشقی میں ،بہت رسوائی ہوئی ہے

ہر بار یہی ارادہ کیا کہ چهوڑ دیں اس کو
کیا کریں کہ لب بلب جاں آئی ہوئی ہے

میری جان اس مہربان میں ہے بند
یہ لوگوں کو کس بات کی قیامت آئی ہوئی ہے؟

Rate it: Views: 9 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 13 Mar, 2018
About the Author: Mona Shehzad

I used to write with my maiden name during my student life. After marriage we came to Canada, I got occupied in making and bringing up of my family. .. View More

Visit 104 Other Poetries by Mona Shehzad »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.