"رشتوں کا بازار "
Poet: مونا شہزاد
By: Mona Shehzad, Calgary

یہ ہے رشتوں کا بازار
یہاں ہر اک ہے خریدار
ہر شخص خود تو ہے عزت کا طلبگار 
پر زات اپنی میں ہےنفرت سے مالامال
بولی لگتی ہے روز یہاں
عزت،محبت، اعتبار ،اعتماد
سب کے ہیں بہت ہی سستے دام
میں کهڑی حیران
دیکھے ہوں یہ اندها بیوپار
لب سی رکھے ہیں میں نے
کہ سچ کا نہیں ہے کوئی خریدار
پاوں چهلنی؛روح فگار
سر پر ہے ناکردہ گناہوں کا انبار
چلی جارہی ہوں اس خیال میں
کبھی تو صبح نوید ہوگی
کبھی تو مان،محبت، اعتبار کا سورج طلوع ہوگ
چمکا دے گا رشتوں کا بازار
اس دن نہ ہوگا کوئی خالی ہاتھ
یہ ہے رشتوں کا بازار

Rate it: Views: 16 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 06 Apr, 2018
About the Author: Mona Shehzad

I used to write with my maiden name during my student life. After marriage we came to Canada, I got occupied in making and bringing up of my family. .. View More

Visit 107 Other Poetries by Mona Shehzad »
 Reviews & Comments
Such a nice sharing by Mona Shehzad on this Life poetry section which I also share with my friends. This portal is all the best to get the best poetry.
By: veena, khi on Apr, 16 2018
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.