خاکساری تھی مرے گارے میں
Poet: ڈاکٹر شاکرہ نندنی، پُرتگال
By: Dr. Shakira Nandini, Oporto

خاکساری تھی مرے گارے میں
اور جلن غیر کے انگارے میں

خطا دیکھ گیا ہاتھ سے دل
جاں بھی مطلوب ہے کفارے میں

باتیں بھی بری لگتی ہیں
غیر کے منھ سے ترے بارے میں

اردو میں لگائیں یہ حساب
کیا ملا ہے ہمیں بٹوارے میں

آنکھوں کی عنایت سمجھوں
جو کشش بھی ہے ادب پارے میں

دوستوں کو بھی جدا کرتے ہیں
تبصرے تیرے مرے بارے میں

ایک مٹّی سے بنے ہیں سب شاکرہ
ایک ہی بات نہیں گارے میں

Rate it: Views: 4 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 03 Jun, 2018
About the Author: Dr. Shakira Nandini

I am settled in Portugal. My father was belong to Lahore, He was Migrated Muslim, formerly from Bangalore, India and my beloved (late) mother was con.. View More

Visit 259 Other Poetries by Dr. Shakira Nandini »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.