پل میں
Poet: Hukhan
By: Hukhan, karachi

اچھا چلو آج کوئی کام کرتے ہیں
ہوگیا جینا مشکل
اسے اب آسان کرتے ہیں
جو ہوگئے دردِ زمان میں ہم سے دور
آؤ انھیں پھر سے پاس کرتے ہیں
ستم جو کیا برسوں
انھیں بھی دل سے معاف کرتے ہیں
ہو نہ سکی تیاری جہانِ آخر کی
پھر بھی ہمت کرکے
اسے سلام کرتے ہیں
گر نہ ہو سکا نام تو کیا
آؤ خود کو بدنام کرتے ہیں
گر ہے جرم تجھے چاہنا
ہم یہ جرم بار بار کرتے ہیں
اک ہی تو انکار کیا اس نے
ہم اقرار ہزار کرتے ہیں
ہاں جی لیا صدیاں پل میں
یہ اظہار ہم بار بار کرتے ہیں

Rate it: Views: 2 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 20 Jun, 2018
About the Author: Hukhan

Visit 412 Other Poetries by Hukhan »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
nice
By: sohail memon, karachi on Jul, 13 2018
Reply Reply to this Comment
thx
By: hukhan, karachi on Jul, 17 2018
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.