چھپ کے تنہائی میں کچھ اشک بہالے تو بھی
Poet: ارشد ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi (Arshi), Karachi

اپنی آنکھوں میں نئے خواب سجا لے تو بھی
اب نہ دے مجھ کو محبت کے حوالے تو بھی

میں بھی سینے میں لیئے زخم سدا ہنستا رہا
آنکھ میں اشک جو آئیں تو چھپا لے تو بھی

اس سرِ عام تماشے سے کہیں بہتر ہے
چھپ کے تنہائی میں کچھ اشک بہالے تو بھی

تجھ کو اچھا نہیں لگتا یوں ہنسنا میرا
آ کسی روز مجھے خوب رلا لے تو بھی

گو کہ دنیا نے ستم ڈھائے بہت ہیں مجھ پر
آ کوئی پھر نیا مجھ پر ستم ڈھا لے تو بھی

میں نے دن رات دعاؤں میں تجھے یاد کیا
میری خاطر کبھی ہاتھوں کو اٹھا لے تو بھی

جس سے ملتا ہے اسے دوست بنا لیتا ہے تو
ایک دشمن تو کوئی ارشیؔ بنا لے تو بھی
 

Rate it: Views: 8 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 09 Jul, 2018
About the Author: Muhammad Arshad Qureshi (Arshi)

My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More

Visit 76 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) »
 Reviews & Comments
Nice effort
By: Hamid Raza, Sargodha on Jul, 26 2018
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.