سوالیہ نشان نظم " میں کون ہوں؟"

Poet: مونا شہزاد
By: Mona Shehzad, Calgary

عجب زندگانی کی روانی ہے
بدلتے موسموں، بدلتے رشتوں کی کہانی ہے
کواڑ ہوگے ہیں" فصیل جاں "کہ بہت ہی بوسیدہ
اسی لیے تو اب " دیمک" کو آزادی ہے
اب نہیں ہے" اس "کو کسی کا بھی انتظار
کریہہ چہروں ،مکروہ رویوں کی فراوانی ہے،
کسی وقت میں اس پر کوئی "بوجھ" بھاری نہ تھ
عجب ہے اب وہ سب پر "بھاری" ہے
خود اندر سے ٹھٹھر گئی ہے وہ
مشام جاں سے رخصت لے رہی ہے وہ
مژگاں سے حیرت سمیٹ رہی ہے وہ
اس "ناخدا "کے روئیے سے جو روز روز مرئے
خود اپنے ہاتھ سے " کشتی" کو سیندھ لگا رہی ہے وہ
کاتب تقدیر بھی ہے سخت اضطراب میں
اے رب! ایسی اندھیر نگری تیرے اس جہاں میں؟
آکر ٹہر چکے ہیں خزاں کے موسم
شاخ سے ٹوٹ کہ پتوں نے بھلا پھر کب بہار دیکھی ہے؟

Rate it:
08 Oct, 2018

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Mona Shehzad
I used to write with my maiden name during my student life. After marriage we came to Canada, I got occupied in making and bringing up of my family. .. View More
Visit 109 Other Poetries by Mona Shehzad »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City