یوں نہیں ہے کہ ہم بے زباں ہیں

Poet: Zeesahn Lashari
By: Zeeshan Lashari, Kunri

یوں نہیں ہے کہ ہم بے زباں ہیں
ہم جو بولیں وہ سنتے کہاں ہیں

میں جو محفل میں پاس ان کے جاؤں
کہتے ہیں دوست تیرے وہاں ہیں

ہم اکیلے نہیں اس کے مارے
عش میں تو کئی نوحہ خواں ہیں

شیخ صاحب انھیں جا کے دیکھو
ا ن کی آنکھیں ہی دونوں جہاں ہیں

ہے جہاں ان کی زلفوں سے پاؤں تلک
یہ زمیں اور وہ آسماں ہیں

آج پینے میں ایسا بھی کیا ہے
شیخ صاحب بھی بیٹھے یہاں ہیں

پھر سے کیسے یقیں تم پہ کر لیں
اب تو خود سے بھی ہم بد گماں ہیں

کل تلک ہم پہ وہ مہرباں تھے
آج غیروں پہ وہ مہرباں ہیں

ناتواں دل یہ ایسا ہوا ہے
اب تو سانسیں بھی اس پر گراں ہیں

آج بھی شانؔ ہیں یاد ہم کو
اس کمر پہ جو تل کے نشاں ہیں

Rate it:
14 Oct, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Zeeshan Lashari
Visit 16 Other Poetries by Zeeshan Lashari »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City