وہ خوشبو کا پیکر دکھا کر تو دیکھو

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

یہ کیا سلسلہ ہےسنا کر تو دیکھو
وہ خوشبو کا پیکر دکھا کر تو دیکھو

زمیں پر بھی کوئی نہیں میرا اپنا
فضاؤں میں ہر سو اڑا کر تو دیکھو

فلک سے تہی دست آئی تھی لیکن
اندھیرا ہے دل کا جلا کر تو دیکھو

تو رہتا ہے خوابوں میں آنے سے قاصر
میں کیسے اسے یہ بتا کر تو دیکھو

وہ کیسے اٹھے پھر حقائق سے پردہ
ترے دل کو مارا دکھا کر تو دیکھو

مری روح کے اب بدن سے نکل کر
یہ میرا تخیل اڑا کر تو دیکھو

پرندہ ہے طوفانِ وحشت کی زد میں
مگر وہ پیار ا ہے بچا کر تو دیکھو

تجھے آج ملنے کی فرصت نہیں ہے
یہ وشمہ کو میں سجا کر تو دیکھو

Rate it:
15 Oct, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4523 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City