چھڑا پائیں گے

Poet: Syed Zulfiqar Haider
By: Syed Zulfiqar Haider, Gujranwala, Pakistan ; Nizwa, Oman

اب جو ہوئے جدا پھر مل نہ پائیں گے
چاہ کر بھی یہ دل کھل نہ پائیں گے

تم جب بھی ہو گے اداس میں بھی تو تڑپوں گا
تم سے دور ہو کہ بھی کب دور رہ پائیں گے

میں تیری یادوں کو اپنا اوڑھنا بچھونا بنا لوں گا
گزارے ہوئے حسین پل کیسے فراموش کر پائیں گے

میں تو اک بے سروسامان مسافر ہوں کیا میری حقیقت
کانٹوں بھرے سفر میں دامن کیسے بچا پائیں گے

میں اگرچہ اقرارِ وفا نہ کر سکا لیکن تجھے چاہا تو ہے
پیار کی اس حقیقت کو تو وہ بھی نہ جھٹلا پائیں گے

اک اثاثہ بچا ہے میری عمر بھر کی ریاضت کا
وہ بھی جو چھن گیا پھر چاہ کر بھی جی نہ پائیں گے

وہ آج بھی مجھے اپنا سب کچھ مانتے ہیں
بیتی یادوں سے پھر بھلا کیسے پیچھا چھڑا پائیں گے

Rate it:
22 Oct, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Syed Zulfiqar Haider
Visit 50 Other Poetries by Syed Zulfiqar Haider »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City