کوئی طبیب ہم سے بلایا نہ جائے گا

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi (Arshi), Karachi

ہم سے مرض اب اپنا بتایا نہ جائے گا
کوئی طبیب ہم سے بلایا نہ جائے گا

طوفان کو بتادو چلے دیکھ بھال کر
میرا مکاں اب اس سے گرایا نہ جائے گا

مرنے کے بعد بھی میں تو اک بوجھ ہی رہا
لاشہ مرا یہ تم سے اٹھایا نہ جائے گا

سب کچھ ہی ہم کہیں گے سرِ عام اب یہاں
اب تم سے اپنا چہرہ چھپایا نہ جائے گا

اِس کو لکھا ہے اپنے لہو کی دوات سے
یہ نام میرے دل سے مٹایا نہ جائے گا

ہم نے جلایا ہے جو محبت کا اک دَیا
طوفان سے بھی اب یہ بجھایا نہ جائے گا

چپ ہی رہو اب ارشیؔ یہ محفل انہیں کی ہے
تم سے تو اب یہ قصّہ سنایا نہ جائے گا

ایسا لگا ہے زخم دکھایا نہ جائے گا
اس بے وفا کا چہرہ بھلایا نہ جائے گا

لکھا ہوا ہے ساقی نے اپنی دکان پر
کم ظرف کو یاں جام پلایا نہ جائے گا

بیٹھے ہوئے ہیں غیر کے پہلو میں اس طرح
نظروں کو ان سے اب تو ملایا نہ جائے گا

کچھ ہم ہی جانتے ہیں جو ہم پر گذر گئی
حالِ دن اپنا ہم سے سنایا نہ جائے گا

ہم تو مریضِ عشق ہیں دے دیں گے جان بھی
کوئی طبیب ہم سے بلایا نہ جائے گا

کب تک رہو گے چپ ذرا تم غور تو کرو
ہم سے تو یہ وطن یوں لٹایا نہ جائے گا

ارشیؔ ذرا اٹھو چلو اب ہم ہی کچھ کریں
ان سے وطن کا بوجھ اٹھایا نہ جائے گا
 

Rate it:
25 Oct, 2018

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 180 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City