روز اک موڑ یہ کیوں لاتا فسانے میرے

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

روز اک موڑ یہ کیوں لاتا فسانے میرے
اس گزر گاہ پہ دیکھے ہے خزانے میرے

جانے کیسی تھی مرے ہونٹ پہ رکھی ہوئی پیاس
رو پڑا ہاتھ اُٹھائے پہ ہی جانے میرے

آج اُترا وہ مری بات کی گہرائی میں
کچھ سہولت سے دیا ہے جو دعانے میرے

تُو نے آندھی کو کھُلی چھوٹ جو دے رکھی تھی
کب تلک خیر سے رکھتا وہ سرہانے میرے

کوئی اندازہ لگائے مری مجبوری کا
تُجھ پہ کرنا پڑا ہے بھروسہ جو جانے میرے

تُجھ کو دعویٰ تھا ترے فن میں تو یکتائی کا
کوزہ گر چاک سے اُترا میں ہی پانے میرے

اس قدر کہہ تو دیا اُس نےچلی جا اے وشمہ
اس بہانے سے ہوا مجھ سےزمانے میرے

Rate it:
26 Oct, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4523 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City