کہاں جائیں ہم آخر الزام کے مارے

Poet: Sobiya Anmol
By: sobiya Anmol, Lahore

کہاں جائیں ہم آخر الزام کے مارے
دربدر پھرتے ہیں اُسکے نام کے مارے

اُس سے چُھٹ گئی ہے مگر گزر رہی ہے
گئ گزری محبت کے احترام کے مارے

اور ہم جی رہے ہیں ٹھوکریں کھائے
اِک گستاخ گھنی گھلونی شام کے مارے

فرصت میں غرق ہو جاتے ہیں ماضی میں
حیاتِ ناکام ٗ کوششِ ناکام کے مارے

روگ ساری عمر کا لے بیٹھے ہم دیوانے
دو بول اُس گلاب سے کلام کے مارے

کبھی سوچوں کُھل کے جینا سیکھ لوں
کبھی سوچوں موت لے لوں آرام کے مارے
 

Rate it:
29 Oct, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: sobiya Anmol
what can I say,people can tell about me... View More
Visit 128 Other Poetries by sobiya Anmol »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City