مجھی میں ہے جو چھپا ٗ وہ خون کہاں سے لاؤں

Poet: Sobiya Anmol
By: sobiya Anmol, Lahore

مجھی میں ہے جو چھپا ٗ وہ خون کہاں سے لاؤں
جو کھینچ لے رشتوں کو ٗ وہ جنون کہاں سے لاؤں

لے بھاگی ماضی کی کالی رات میرے چین کو
نظامِ کائنات کیسے بدلوں ٗ سکون کہاں سے لاؤں

دن آتے رہیں گے زندگی کے اُس پار جاتے جاتے
مگر وہ سالِ وصال ٗ وہ ماہِ جون کہاں سے لاؤں

اِک ڈور سے منسلک ہو رشتوں کا ہر اگلا پڑاؤ
بکھریں نہ لڑیوں کے موتی ٗ قانون کہاں سے لاؤں

Rate it:
05 Nov, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: sobiya Anmol
what can I say,people can tell about me... View More
Visit 128 Other Poetries by sobiya Anmol »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City