حآلِ دِل

Poet: SHAKILA AJMAL
By: shakila ajmal, Daharki

یہ حالِ دِل کس کؤ سناؤں
کٰیسے میں نا امیدی کے دیے بجھاوَں
سنانے کو دکھ بےشمار ھیں
زندگی کے کتنے روپوں سے پردہ ھٹاؤں
میں تو خود پریشاں زندگی سے
دوسروں کو کیسے آس و امید دلاؤں
ہر اپنا بھی تو اب پرایا ہو گیا
کس کے کاندھے کو رونے کی خاٰطر اپنا بناؤں
اپنوں نے ہی دکھ بے شمار دیے
اب کہاں گنجائش ہے کہ پراؤں کو آزماؤں
ہر شخص تو خود غرض ہے
کس کو قابلِ اعتبار بناؤں
یہ لوگ تو خوشی میں بھی شرٰیک نہیں ہوتے
سوچتی ہوں جنازے پر کس کس کو بلاؤں
ہر روز نیا روپ دھارتی ہے زندگی
اتنی الجھن میں اب کیا کیا سلجھاؤں
درد دینے والے ہی ہوں جب اپنے شکیلا
تو کس سے کہیں ‘‘درد ہے ذرا مرہم لگاؤ‘‘

Rate it:
21 Nov, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: shakila ajmal
Visit Other Poetries by shakila ajmal »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City