پھول سا اک کھلا کھلا نکلا

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

پھول سا اک کھلا کھلا نکلا
مسکراتا وہ خوش ادا نکلا

تلخ گو ۔ شوخ ۔ بے ردا چہرہ
شرم سے عاری بے حیا نکلا

برسوں سے جس کو ڈھونڈھتی تھی نظر
شام غم کی جزا عطا نکلا

حسن پر اپنے ہے بہت نازاں
کہہ رہا ہے وہ کج ادا نکلا

آج پورے شباب پر تھا چاند
دکھ گیا خود بخود خفا نکلا

کوشیں لاکھ کیں چھپانے کی
حال دل سارا کہہ گیا نکلا

بات نکلی تھی بے وفائی کی
اڑ گیا کس لئے گلہ نکلا

وجہ ناراضگی تو کچھ بھی نہیں
پھر بھی ہے وہ خغا خفانکلا

دیر سے ڈھونڈھے کچھ خلاؤں میں
ایک معصوم بے صدا نکلا

صاف ستھرا حسن مرا کردار
صاف شفاف آئینہ نکلا

زخم جو روح پر لگا وشمہ
پیار اُس بے وفا سے کیا نکلا
 

Rate it:
23 Nov, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4523 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City