چالاک

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi (Arshi), Karachi

بہت چالاک ہیں ہم جانتے ہیں
یہ کیوں ہم سے سزائیں مانگتے ہیں

وفا چھو کے نہیں گزری تھی جن کو
وہی ہم سے وفائیں مانگتے ہیں

خزاں سے یاریاں جن کی تھیں وہ اب
بہاروں کی دعائیں مانگتے ہیں

زمانے بھر کے مجرم ہیں یاں جو بھی
وہی تو ہم کو مجرم مانتے ہیں

مرے اظہار سے یہ خوف کیسا
وہ آنکھوں کے اشارے جانتے ہیں

عبادت ٹوٹی پھوٹی ہے یاں جن کی
وہی اللہ سے رحمت مانگتے ہیں

بڑا بوجھل ہوا یہ دل اب اپنا
دکھوں کو اپنے ہم اب بانٹتے ہیں
 

Rate it:
30 Nov, 2018

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 180 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City