دل ہی نہ رہا ٗ چاہت کیا کرتے

Poet: Sobiya Anmol
By: Sobiya Anmol, Lahore

دل ہی نہ رہا ٗ چاہت کیا کرتے
اُسکے ستموں کی شکایت کیا کرتے

صفحہ ہی پھاڑ دیا اُس کے نام کا
گھٹ گھٹ کے یوں ندامت کیا کرتے

ہوئی تھی اِک خطا ٗ سو ہو گئی
پچھتاتے رہنے کی بے وجہ عادت کیا کرتے

تعلق ہی توڑ دیا ٗ یہی بہتر لگا
محبت تھی اُس سے ٗ نفرت کیا کرتے

زحمت ہوتے ہی زوال نہ بن جاتی
اُسے جھیلتے رہنے کی زحمت کیا کرتے

خدا کی جانب منہ موڑ دیا اُس نے
اچھا ہی کیا ٗ اُس سے معزرت کیا کرتے

چپ تان لی اُس کی بے وفائی سے بس
کیا ہو جاتا بھلا ٗ قیامت کیا کرتے

Rate it:
10 Dec, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: sobiya Anmol
what can I say,people can tell about me... View More
Visit 128 Other Poetries by sobiya Anmol »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City