اضطرابیِ دل کا کوئی ، حل ہی بتاؤ

Poet: اخلاق احمد خان
By: Akhlaq Ahmed Khan, Karachi

اضطرابیِ دل کا کوئی ، حل ہی بتاؤ
اسیرِ زٗلفِ یار نہ سہی ، مقتل ہی بتاؤ

جو بھڑکی ہوئی آتشِ سینے کو بُجھادے
برستا ہوا ایسا کوئی ، بادل ہی بتاؤ

کسی یاد میں دھڑکے ہوئے دل کی خبر دو
کوئی آنکھ سے بہتا ہوا ، کاجل ہی بتاو

انسانوں کی بستی میں سامانِ ہلاکت ہے
امان میں رہنے کو ، جنگل ہی بتاو

رونے کے لئے باپ کا کاندھا مجھے دیدو
چٗھپنے کے لئے ماں کا ، آنچل ہی بتاو

جزبات کو کُچل کر دنیا کمانے والوں
کبھی جی ہو جسمیں زندگی وہ ، پَل ہی بتاؤ

شجرِ گمراہی سے بدتر نہیں بُو کوئی
مگر تم نسلِ نَو کو ، صندل ہی بتاؤ

چشمِ غبارِ کو شگافِ فلک کہہ دو
سخت زمین کو تم ، دلدل ہی بتاؤ

بازار میں اب وہ ہیرے ہیں نہ جوہری
ریشمی کپڑے کو تم ، ململ ہی بتاؤ

فہمِ معرفتِ الہیٰ دل سے نکال کر
علم کا میدان بس ، جل تھل ہی بتاؤ

اخلاق طبیعت پر گراں ہیں یہ چُبتے ہوئے سوال
جواب آج نہیں تو ان کے ، کل ہی بتاؤ

Rate it:
11 Dec, 2018

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Akhlaq Ahmed Khan
Visit 83 Other Poetries by Akhlaq Ahmed Khan »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City