غدار

Poet: محمد صالح
By: Muhammad Sualeh , Karachi

میں بھی غدار اور تو بھی غدار
بھوک سےمرتی ہر اک بو بھی غدار
غدار ہے سچ اور غدار ہے عشق
سسکتے جسم سے بہتا لہو بھی غدار

مجب وطن بھی غدارفرعونیت شاندار
میں بھی غدار اور تو بھی غدار

گر ہو قاتل کا بھی پتہ مت بولو
یہ ہے غداری کا رستہ مت بولو
مجھے ہے میرے بزرگوں کی تجویز
تمھارےگھروالوں کاہےواسطہ مت بولو

پرکرونگا سوال جو ہوں میں بیدار
میں بھی غدار اور تو بھی غدار

رہبروں کو رہزنی کا خیال ہے
وردی کے ہاتھوں مٹی نیلام ہے
ملک توڑ کر جن کا پاک کردار ہے
میرا ان سب ہی سے سوال ہے

پوچھیں جو ہم سوال کون ہےذمہ دار
میں بھی غدار اور تو بھی غدار

Rate it:
24 Jan, 2019

More Political Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Sualeh
Visit 4 Other Poetries by Muhammad Sualeh »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City