قسمت کی لکیروں سے یوں پتھر نہیں جاتے

Poet:
By: Shahid Hasrat, Multan

قسمت کی لکیروں سے یوں پتھر نہیں جاتے
ہاتھوں کو جلانے سے مقدر نہیں جاتے

مدت سے اداسی نے بھی ڈالا ہے پڑاؤ
آنگن سے بھی اس درد کے لشکر نہیں جاتے

ٹوٹے ہوں جو پھینکے ہوئے پتھر سے کسی کے
ان کانچ کے ٹکڑوں کے کبھی ڈر نہیں جاتے

اے وقت ذراٹھہر کہ میں لمحے سنبھالوں
نظروں میں اتر آئیں تو منظر نہیں جاتے

ہر روز ہی دیتے ہو چلے جانے کی دھمکی
تم جاتے ہو تو جاؤ کہ ہم مر نہیں جاتے

جس در پہ دیا بیٹھی ہوں حسرت کی بلائیں
خواہش کے لٹیرے وہاں اندر نہیں جاتے

Rate it:
27 Jan, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Shahid Hasrat
Visit 264 Other Poetries by Shahid Hasrat »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City