بے سمت مسافر ہیں ابھی جھول رہے ہیں

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

طوفانوں میں منزل کی خبر بھول رہے ہیں
بے سمت مسافر ہیں ابھی جھول رہے ہیں

دنیا کے خرابوں کا اثر ان پہ نہ ہو گا
جو گردشِ حالات کا معمول رہے ہیں

اس عمر کے چہرے سے یہ جالے تو ہٹا دو
جو وقت کے خاروں میں کبھی پھول رہے ہیں

ہم جن کی نگاہوں میں پڑھا کرتے تھے قصے
وہ صورتِ احوال میں مشغول رہے ہیں

کیا بات ہے وہ امن کا پیغام ہیں لائے
جن ہاتھوں میں بھی ظلم کے تِرسول رہے ہیں

جس شہرِ تمنا کو بسایا تو نے وشؔمہ
اس راہ کی ہم بھی تو کبھی دھول رہے ہیں

Rate it:
25 Feb, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4523 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City