افسانہَ درویش

Poet: نواب رانا ارسلان
By: نواب رانا ارسلان, Ismailabad, Umerkot

لگتا ہے مدعی تمہیں جچا نہیں انداز شارانہَ ء درویش
یہ شاعری لفظوں کا ہجوم نہیں ہے یہ خزانہَ ء درویش

ہائے کیا خوب منایا ہجر معشوقانہَ ء درویش
کسی کو بتایا، کوئی نہ جان پایا، افسانہَ ء درویش

سُنا ہے کافی شُہرت پائی ہے زمانے میں
گئے دن تمہارے اب تو ہے زمانہَ ء درویش

تو کیا ہوا تیری نگری میں تُو جینے نہیں دیتا
ایک تو نہیں ہے میری جان ٹھکانہَ ء درویش

تھوری سی لاگ ، اور دل میں محبت بھی رکھتے ہیں
میرے احباب توُ بتا پسند آیا، انداز حریفانہَ ء درویش

بیچ سمندر جو اک شخص حسیں دکھ لیا
ساحل کس طرف ہے یہ بھول گیا سفینہَ ء درویش

بے درد محفل میں نامِ نگار نہیں لیا جاتا
اگر جاننا ہے تجھے دیکھ لے چیڑ کے سینہَ ء درویش

جابجا ہم نے اُلفت پائی کوہستان میں
چلو کوئی تو سمجھا قرینہَ ء درویش

کُوے یار میں ہر روز ارسلؔان جانا آساں نہیں
بہت دور رہتے ہیں یارانہَ ء درویش

Rate it:
04 Mar, 2019

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: نواب رانا ارسلان
Visit 28 Other Poetries by نواب رانا ارسلان »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City