اور اس جیسی بجھارت نہیں کی جاسکتی

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

زیست کے ساتھ تجارت نہیں کی جاسکتی
اور اس جیسی بجھارت نہیں کی جاسکتی

ہم ترے ساتھ محبت بھی نہیں کر سکتے
اور ترے ساتھ شرارت نہیں کی جاسکتی

ہم تو بس دیکھ ہی سکتے ہیں ترا رنگ ہنر
اپنے جیسوں سے نصیحت نہیں کی جاسکتی

میرے گلشن میں خزاں کا ہے بسیرا پھر بھی
غم میں غمگین ہوں حالت نہیں کی جاسکتی

میری یہ زیست مثالی ہے ترا پیار ملا
اس سے بڑھ کر تو فضیحت نہیں کی جاسکتی

ایسے منصف سے بھلا اور امیدیں کیا ہوں
جس سے اپنی ہی وکالت نہیں کی جاسکتی

وہ تو کہتے ہیں سبھی چھوڑ کے آؤ ملنے
وشمہ ہم سے یہ جہالت نہیں کی جاسکتی

Rate it:
05 Mar, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4523 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City