ہم سے جو وہ مفر ہو گئی

Poet: نواب رانا ارسلان
By: نواب رانا ارسلان, Ismailabad, Umerkot

ہم سے جو وہ مفر ہو گئی
اُسکی ہر ادا گل تر ہو گئی

ہماری آہ بھی کسی نے نہ سُنی
اُسکی ہر بات با اثر ہو گئی

کبھی نظر آنا کبھی آنکھوں سے اوجھل
ہمارے سامنے ہی وہ ساحر ہو گئی

بارش کے موسم میں وصالِ یار
وہ آیا ہی تھا کہ سحر ہو گئی

جادو ایسا کے خواب میں بھی نہ ملے
ناکام ہماری خوابوں کی لہر ہو گئی

اُسکو کہا ہوگا ہمارا خیال
ہمارے لیے ہی وہ تصور ہو گئی

اسُکے فراق میں پاگل ہوا ارسلان
مشہور یہ بات شہر در شہر ہو گئی

Rate it:
06 Mar, 2019

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: نواب رانا ارسلان
Visit 28 Other Poetries by نواب رانا ارسلان »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City