محنتِ مفلِس پہ اپنے آشیانے بسائے جاتے ہیں

Poet: نواب رانا ارسلان
By: نواب رانا ارسلان, Ismailabad, Umerkot

محنتِ مفلِس پہ اپنے آشیانے بسائے جاتے ہیں
لُوٹ کر گنجینۂَ چمن اپنے خواب سجائے جاتے ہیں

اب بھی ناصر غریب کے گھر جلائے جاتے ہیں
اب بھی جشنِ طرب یوں ہی منائے جاتے ہیں

میں کیوں مانوں ان بادشاہوں کے اصولوں کو
جمہوریت کی آڑ میں نظامِ جمہوری مٹائے جاتے ہیں

اے خالقِ کائنات میرے وطن کی حفاظت فرما
اب تو یہاں جھوٹے بیان بھی دلوائے جاتے ہیں

اے تخت نشینو کیا تم بھول گئے ضیاء کا حال
جب پرتی ہے " خدا "کی مار کئی بادشاھ اُڑائے جاتے ہیں

ارسلؔان کہ تیرا بیانِ بغاوت انہیں بڑا نہ لگے
یہاں بولنے والے بھی تو ستائے جاتے ہیں

Rate it:
11 Mar, 2019

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: نواب رانا ارسلان
Visit 28 Other Poetries by نواب رانا ارسلان »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City