تیری دنیا کی اگر ہم بھی حقیقت ہوتے

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملاشیا

تیری دنیا کی اگر ہم بھی حقیقت ہوتے
ہم بھی اس کارِ محبت میں سلامت ہوتے

گر نہ یوں رسم و روایت کے کراتب ہوتے
تیرے افکار نہ یوں نذرِسیاست ہوتے

وقت احساس کی دولت سے تو معمور نہ تھا
تیری محفل میں بھلا کیسے قیامت ہوتے

ہوتی دنیا میں مرے نام کے شمع روشن
تیری ہستی کی اگر چشمِ عنایت ہوتے

کون نفرت کی ہواؤں کو ہوائیں دیتا
"خون کے رشتے وفا کی جو علامت ہوتے"

ان اندھیروں میں اگر دیپ جلائے جاتے
زندگی تیری تمنا میں سلامت ہوتے

تیرے گلشن میں اگر درد نہ کھلتے وشمہ
اپنے دل پر نہ کہیں داغِ محبت ہوتے

Rate it:
25 Mar, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: وشمہ خان وشمہ
Visit Other Poetries by وشمہ خان وشمہ »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City