کیا تماشا ہے کہ ہر شخص تماشائی ہے

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملاشیا

کیا تماشا ہے کہ ہر شخص تماشائی ہے
میری شہرت بھی مرے واسطے رسوائی ہے

میرے سینے میں تجھے ملنے کی خواہش ہے مگر
ایک دنیا مجھے ملنے کی تمنائی ہے

کل جو کترا کے گزرتا تھا اسے راہوں میں
آج دیکھا تو مجھے خود پہ ہنسی آئی ہے

ہر کوئی جانتا ہے میں نے تجھے پیار کیا
میری اس شہر کے لوگوں سے شناسائی ہے

کیا کروں اس کے بنا جینا نہیں ہے میں نے
حضرتِ ناصح عبث پندِ شکیبائی ہے

لوگ مجبور بھی ہوتے ہیں محبت میں یہاں
وشمہ کب ایسا کہا ہے کہ وہ ہرجائی ہے

Rate it:
26 Mar, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: وشمہ خان وشمہ
Visit Other Poetries by وشمہ خان وشمہ »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City