ٹوٹے آئینوں کی بات کرتا ہوں

Poet: Rafay Nawaz
By: Rafay Nawaz, lahore

خفا مت ہو کہ دل کی خواہشوں کی بات کرتا ہوں
میری جاں کب میں بے بس آنسوؤں کی بات کرتا ہوں

نہیں مجھکو گوارا غنچہ و گل کی بیابانی
میں بارودی فضا میں گھونسلوں کی بات کرتا ہوں

جوار شہر میں بدصورتی نے ڈیرے ڈالے ہیں
مگر میں ہوں کہ ٹوٹے آئینوں کی بات کرتا ہوں

مجھے کیونکر مٹائے گا تھپیڑا وقت آخر کا
کہ سانسیں بیچ کر میں دھڑکنوں کی بات کرتا ہوں

گھٹا چھائی ہے اس پہ دہشتوں کی آج تو کیا ہے
میں اس دھرتی کے گم گشتہ دنوں کی بات کرتا ہوں

میری خود ساختہ دنیا کو سمجھے گا زمانہ کیا
میں خود حیران ہوں کن موسموں کی بات کرتا ہوں

Rate it:
26 Mar, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Rafay Nawaz
Visit Other Poetries by Rafay Nawaz »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City