پھر سے جینے کو دل کرتا ھے

Poet: Zubair ibrahim
By: Zubair Ibrahim, Barcelona.

پھر سے جینے کو دل کرتا ھے
محبت کرنے کو دل کرتا ہے

بھول گیا ھوں وہ کرب و تکلیف
بیمارِعشق ھونے کو دِل کرتا ھے

جِس کے آنے سے بہار آتی تھی
چلے جانے سے خِزاں گھر بساتی تھی

وہ چہرہ دیکھنے کو دِل کرتا ھے
بیمارِعِشق ھونے کو دِل کرتا ھے

وہ اُلفت کہ جِس مِیں عمر گزاری ھے
وہ چاھت کہ جِس بازی ھاری ھے

ہجِر کو وصل کرنے کا دِل کرتا ہے
بیمارِعشق ھونے کو دِل کرتا ھے

زِندگی کے آخری اِس پڑاؤ میں
کمر کے ایسے اِس جھکاؤ میں

پِھر سے کھڑا ھونے کو دِل کرتا ھے
بیمارِعشق ھونے کو دِل کرتا ھے

پھر سے جینے کو دل کرتا ھے
محبت کرنے کو دل کرتا ہے
 

Rate it:
21 May, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Zubair Ibrahim
Visit Other Poetries by Zubair Ibrahim »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City