مکتب عشق

Poet: Muhammad Siddique Prihar
By: Muhammad Siddique Prihar, Layyah

برائے نعت محبوب کاانتخاب ہم بھی ہیں
مکتب عشق کاایک نصاب ہم بھی ہیں

پھیلی رہے گی جہاں میں ہرسوروشنی
محبت میں چمکتے ہوئے آفتاب ہم بھی ہیں

پیاساکوئی بھی لوٹ کرنہیں ہے جاتا
نگاہوں سے انہیں کرتے سیراب ہم بھی ہیں

مہکتی رہے گی فضازبان کی خوشبوسے
رکھتے نعتوں کاگل نایاب ہم بھی ہیں

چوم کرتلوے سرکارکے روح الامین بولے
سیکھے ہوئے محبوب کے آداب ہم بھی ہیں

مل جائے گی ایک دن تعبیراس کی
دیکھتے مدینے کے حسیں خواب ہم بھی ہیں

نہیں آئے گی شکست ہمیں کسی میدان میں
بسائے ہوئے محبت ابوتراب ہم بھی ہیں

للکارکریزیدیوں سے یوں فرمایاحسین نے
دوش نبوت پرسوارنواب ہم بھی ہیں

ملتی ہے تسکین میلادرسول کی محفلوں میں
لائے ہوئے دلوں میں انقلاب ہم بھی ہیں

گزرتی رہے محبت رسول میں اس طرح زندگی
امتحان محشرمیں یوں کامیاب ہم بھی ہیں

کوئی احساس نہیں ہے صدیقؔاس وقت تمہیں
تلاش کرتے رہناہمیں نایاب ہم بھی ہیں
 

Rate it:
10 Jul, 2019

More Religious Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Siddique Prihar
Visit 115 Other Poetries by Muhammad Siddique Prihar »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City