شجر یوں زندہ ہے کہ اپنی جگہ کھڑا ہوا ہے

Poet: Usama Jalil
By: Azam Peerzadah, Rahim Yar Khan

شجر یوں زندہ ہے کہ اپنی جگہ کھڑا ہوا ہے
پھر کیوں کوئی اس کی جان کے پیچھے پڑا ہوا ہے

کل جو بھکاری قریب مرگ تھا مانگتے ہوئے
آج اس کو دیکھا صحیح سلامت کھڑا ہوا ہے

انا آکے درمیاں سب تعلق کھا گئی ہے
میں اپنی ضد پہ اڑا ہوا ہوں، وہ اپنی ضد پہ اڑا ہوا ہے

نفرت کے صحرا میں اسے تلاش آبِ محبت ہے
سمندر پاس ہے لیکن وہ کوسوں دورکھڑا ہواہے

وہ ہی اچھا ہے زمانے میں جو الفت پاس رکھتا ہے
وہ ایسا ہے زمانے میں کہ پتھر میں نگینہ جڑا ہوا ہے

Rate it:
30 Jul, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Azam Peerzadah
Visit Other Poetries by Azam Peerzadah »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City