اُٹھا ہے جو پہلو سے کوئی درد پرانا

Poet: Aamir Ali Abbas
By: Aamir Ali Abbas, Attock

اُٹھا ہے جو پہلو سے کوئی درد پرانا
مُمکن نہ رہا آنکھ سے اشکوں کا چُھپانا

آنکھوں سے برستے رہے انمول نگینے
جیسے کوئی زردار لُٹاتا ہے خزانہ

لکھا ہے جو خاموش نگاہوں نے ہماری
تا دیر رہے گا وہ تیرے لب پہ فسانہ

کیونکر شبِ تنہایئ مجھے راس نہ آتی
کچھ اُس کی نہ منزل ھی نہ کچھ میرا ٹھکانہ

یوں بھی ہمیں نسبت تیری آنکھوں سے رہے گی
غم تیری نشانی ہے یہ دل تیرا نشانہ

ہنستے ہیں تو دنیا کو گوارا نہیں ہوتا
روتے ہیں جو ہم لوگ تو ہنستا ہے زمانہ

Rate it:
09 Aug, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Aamir Ali Abbas
Visit Other Poetries by Aamir Ali Abbas »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City