ایک دن: پی ڈی سی این(آغاخان یونیورسٹی) گلگت میں

(Amir jan haqqani, Gilgit)

امیرجان حقانی اور ڈاکٹر مولاد کا أغاخان یونیورسٹی گلگت میں دیامر کے اساتذہ کیساتھ۔گروپ فوٹو

یہ 17 اپریل 2015 کی بات ہے۔ پی ڈی سی این گلگت کے ہیڈ ڈاکٹر مولا داد صاحب کی فرماٸش پر دیامر سے تشریف لاٸے ہوٸے اساتذہ کرام سے گفتگو کا موقع ملا۔ پی ڈی سی این گلگت بلتستان کے پراٸیویٹ اور سرکاری اسکولوں کے اساتذہ کے لیے ورکشاپس اور ٹریننگ کا اہتمام کرتا ہے۔جس میں اساتذہ کو جدید دور کے تقاضوں کے مطابق تدریس کے سکلز سکھاٸے جاتے ہیں۔

ایسا ہی ایک ٹریننگ کورس دیامر کے اساتذہ کرام کے لیے منقعد کیا گیا تھا۔یہ پندرہ روزہ ٹریننگ کا أخری دن تھا۔ڈاکٹر مولا داد صاحب اور احمد جامعی سخی صاحب کے حکم پر دیامر کے اساتذہ سے ایک سیشن میں گفتگو بھی کی۔اساتذہ کو بھی سنا اور اپنے خیالات ان سے شیٸر کی۔سوال وجواب بھی ہوٸے۔

دونوں صاحبان نے انتہاٸی عزت دی۔ پورے ادارے کا وزٹ کروایا۔ شعبہ جات پر بریفنگ دی۔ویڈیو کانفرنس روم اور ای لاٸیبریری کا بھی خصوصی وزٹ کرایا۔ اپنے نیک جذبات سے أگاہ کیا اٸندہ کے منصوبوں سے مطلع بھی کیا۔ محترم سلطان عالم اور زینت شاہ صاحب اور درویش کریم کے ساتھ بھی ملاقات ہوئی۔یہ صاحبان ٹرینر ہیں۔بہت سنجیدہ احباب ہیں۔اپنے پروفیشن کے ساتھ مخلص بھی۔

میں ذاتی طور پر ان احباب اور پی ڈی سی این کے تمام عملے کا شکر گزار ہوں کہ انہوں نے گزشتہ تین سال سے تعلیمی میدان میں دیامر کو فوکس کیا ہوا ہے۔ دیامر کے اساتذہ کو تدریسی ٹریننگ دینے کے ساتھ ساتھ دیامر کے مختلف اسکولوں میں کتابیں، یونیفارم، وائٹ بورڈ، کرسیاں اور الماریاں تک *تعلیمی گفٹ* کی مد میں دے رہے ہیں۔ پی ڈی سی این کے تمام احباب کا ضلع دیامر کے ساتھ پرخلوص رویہ دیکھ کر اطمینان ہوتا ہے۔ اللہ کرے باہمی انڈرسٹینڈنگ کا یہ سلسلہ مزید بڑھے۔ دیامر کے استاتذہ بھی بہت ساری محبتیں سمیٹ کر رخصت ہوئے ہیں۔میں سمجھتا ہوں کہ باہمی اشتراک و تعامل ضروری ہے۔ گھل ملنے سے بہت ساری غلط فہمیاں دور ہوجاتی ہیں۔ معاشرتی بھاٸی چارے کو فروغ ملتا ہے۔مجھے بعض اساتذہ نے بتایا کہ یہاں أنے سے پہلے ان کے دل و دماغ میں بہت سارے شبہات تھے جو رفو ہوچکے ہیں۔دوریوں سے بھی غلط فہمیاں جنم لیتی ہیں۔

ڈاکٹر مولاد صاحب نے مجھے بتایا کہ ”داریل کے ایک استاد نے گلہ کیا کہ دیگر اضلاع کی فی میل ٹیچرز کو بھی ٹریننگ کے لیے بلایا جاتا مگر دیامر کی خواتین ٹیچرز کو ٹریننگ کے لیے نہیں بلایا جاتا جو امتیازی رویہ ہے۔ اس پر میں نے کہا کہ ایک وقت تھا أپ یعنی میل ٹیچرز کو بھی مدعو کرنا مشکل تھا۔اب أپ کو بلایا ہے تو ایک وقت أٸے گا کہ فی میل ٹیچرز کو بھی مدعو کیا جاوے گا لیکن اس کے لیے ابھی وقت چاہیے۔ لوگوں میں شعور أجاٸے اور وہ ذہنی طور پر تیار ہوجاجاٸیں کہ خواتین ٹیچرز کو بھی ورکشاپس اور ٹریننگ کے ذریعے تدریسی تربیت کے سکلز سکھاٸے جاسکتے ہیں۔تب ترجیحی بنیادوں پر انہیں تربیت دینے کے لیے بلایا جاٸے گا۔اس میں دیامر کے روایات کا بھی بھرپور انتظام کرکے انہیں مکمل احترام و عزت کیساتھ بلایا جاٸے گا۔ جس پر وہ استاد بہت خوش ہوٸے۔“

ویسے رفاہی کام کرنے والے اداروں اور این جی اوز کے کارپردازوں کی سوچ بھی ڈاکٹر مولاد جیسی ہوگی تو ادارے بہترین خدمات انجام دے سکتے اور ہر جگہ میں اپنے لیے جگہ بناسکتے ہیں۔مساٸل وہاں جنم لیتے ہیں جہاں دوسروں کی روایات اور اقدار کا خیال نہیں کیا جاتا بلکہ بےدردی سے پامال کیے جاتے ہیں۔ڈاکٹر مولاد کی سوچ بلا شبہ نیک اور قابل قبول ہے۔ ایسے لوگ ہی باہمی اشتراک و تعامل اور غلط فہمیاں دور کرنے کا سبب بنتے ہیں۔ مولا ٗ مولاداد کو سلامت رکھے۔تو
احباب کیا کہتے ہیں؟
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 148 Print Article Print
About the Author: Amir jan haqqani

Read More Articles by Amir jan haqqani: 240 Articles with 107472 views »
Amir jan Haqqani, Lecturer Degree College Gilgit, columnist Daily k,2 and pamirtime, Daily Salam, Daily bang-sahar, Daily Mahasib.

EDITOR: Monthly
.. View More

Reviews & Comments

kash ap ki tara her koi sochta ham apny region ko kahi say kahi lajaty hamari leadership behter hoti but umeed hay waqt nai lagay ga ab bi inshallah ye shaoor janam lay ga ki change lana culture may zarori hai
By: Naik Bano, Rawalpindi/Gilgit on Apr, 24 2019
Reply Reply
0 Like
Language: