بیٹی سے بڑی کوئی نعمت نہیں۔۔۔ وہ 4 نیوز اینکرز کون سے ہیں جنہیں اللہ نے صرف بیٹیوں سے نوازا؟

کہتے ہیں کہ اللہ پاک جب بہت خوش ہوتا ہے تو زمین پر بیٹی جیسی رحمت اتارتا ہے، ایسے میں یہ ماں باپ کے لیے بہترین تحفہ ہوتا ہے۔ پاکستان کے نیوز چینلز پر آپ نے کئی اینکرز دیکھے ہوں گے جو کئی کئی گھنٹے ٹی وی اسکرین کے آگے بیٹھے خبریں پڑھ رہے ہوتے ہیں۔

تاہم یہ لوگ اپنی نجی زندگی کے حوالے سے زیادہ نہیں بتاتے، کچھ نیوز اینکرز جو سوشل میڈیا پر ایکٹو ہوتے ہیں ان کے مداح ضرور ان کی خبر رکھتے ہیں۔

آج ہم آپ کو ان 4 مشہور نیوز اینکرز کے بارے میں بتانے جا رہے ہیں جنہیں اللہ نے بیٹی جیسی شاندار نعمت سے نوازا ہے۔

رابعہ انعم

رابعہ انعم پاکستان کی معروف نیوز اینکر اور ٹاک شو کی میزبان رہ چکی ہیں۔ انہوں نے فی الحال نیوز پڑھنا اور پروگرام کی میزبانی کرنا ترک کر رکھا ہے اور اپنا سارا وقت بزنس کو دے رہی ہیں۔ ان کا بیوٹی سیلون ہے جبکہ رابعہ انعم کا شمار ان اینکرز میں ہوتا ہے جنہیں اللہ نے بیٹی سے نوازا۔ رابعہ کی شادی سال 2018 میں ہوئی تھی جبکہ اب ان کی ایک ننھی سی پری ہے جس کا نام 'انابیہ' ہے۔ رابعہ انعم نے تاحال اپنی بیٹی کی تصویر سوشل میڈیا اکاؤنٹ پر اپ لوڈ نہیں کی۔

مبشر ہاشمی

مبشر ہاشمی کو اکثر آپ نے خبریں پڑھتے دیکھا ہو گا، انہیں بھی اللہ پاک نے ایک پیاری سی بیٹی سے نوازا ہے۔ مبشر ہاشمی اکثر و بیشتر اپنی بیٹی کے ہمراہ انسٹاگرام اکاؤنٹ پر مداحوں کے لیے تصاویر شئیر کرتے نظر آتے ہیں۔ انہوں نے اپنی بیٹی کا نام 'پریشے ہاشمی' رکھا ہے۔

نیلم یوسف

نیوز اینکر، صحافی اور ٹی وی میزبان نیلم یوسف کے گھر پہلی بیٹی کی پیدائش گزشتہ برس ہوئی۔ تاہم حال ہی میں انہوں نے اپنی بیٹی کے ہمراہ انسٹاگرام اکاؤنٹ پر کچھ تصویریں شئیر کیں۔

اِرضہ خان

پاکستان کی ایک اور معروف نیوز اینکر ارضہ خان کو بھی اللہ نے بیٹی جیسی نعمت سے نوازا۔ انہوں نے اپنی ننھی سی پری کا نام 'ایلیا ذیشان' رکھا۔

٭ اِس حوالے سے اپنی قیمتی رائے سے ہمیں ضرور آگاہ کریں، ہماری ویب کے فیسبک پیج پر کمنٹ کر کے بتائیں۔


WATCH LIVE NEWS

Samaa News TV PTV News Live Express News Live 92 NEWS HD LIVE Pakistan TV Channels

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.

4202