’افغانستان میں چھپے 76 دہشتگرد پاکستان کے حوالے کیے جائیں‘

17 Feb, 2017 بی بی سی اردو
پاکستانح فوج کا کہنا ہے کہ افغان سفارتخانے کے حکام کو جی ایچ کیو طلب کر کے ایسے 76 دہشت گردوں کی فہرست ان کے حوالے کی گئی ہے جو کہ افغانستان میں چھپے ہوئے ہیں۔
جی ایچ کیو

پاکستانی فوج کا کہنا ہے کہ افغان سفارتخانے کے حکام کو جی ایچ کیو طلب کر کے ان سے وہاں پناہ لینے والے دہشت گردوں کے خلاف فوری کارروائی کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

فوج کے شعبۂ تعلقاتِ عامہ کے سربراہ میجر جنرل آصف غفور نے جمعے کی صبح ٹوئٹر پر اپنے پیغام میں بتایا کہ افغان حکام کو ایسے 76 دہشت گردوں کی فہرست دی گئی ہے جنھوں نے افغانستان میں پناہ لے رکھی ہے۔

پاکستان اور افغانستان کی سرحد غیرمعینہ مدت کے لیے بند

آئی ایس پی آر کے ڈائریکٹر جنرل کے مطابق افغان حکام سے کہا گیا ہے کہ وہ ان دہشت گردوں کے خلاف کارروائی کریں اور انھیں پاکستان کے حوالے کیا جائے۔

خیال رہے کہ جمعرات کی شام سندھ کے شہر سیہون میں لعل شہباز قلندر کی درگاہ پر خودکش حملے میں 70 سے زیادہ افراد کی ہلاکت کے بعد پاکستان نے افغانستان کے ساتھ اپنی سرحد بھی تاحکمِ ثانی بند کرنے کا اعلان کیا تھا۔

پاکستانی فوج نے کہا ہے کہ یہ فیصلہ سکیورٹی خدشات کی وجہ سے کیا گیا ہے۔

پاکستان کے سرکاری ٹی وی کے مطابق طورخم کے بعد چمن کے مقام پر بھی افغان سرحد بند کر دی گئی ہے اور سرحد عبور کرنے کی کوشش کرنے والے کو گولی مار دینے کا حکم دیا گیا ہے۔

ٹویٹ

افغان حکام سے کہا گیا ہے کہ وہ ان دہشت گردوں کے خلاف کارروائی کریں اور انھیں پاکستان کے حوالے کیا جائے۔

پاکستان میں گذشتہ چند دنوں کے دوران شدت پسندی کے واقعات میں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے اور ان میں 100 سے زیادہ افراد ہلاک ہوئے ہیں۔

ان حملوں میں سے بیشتر کی ذمہ داری کالعدم تحریکِ طالبان سے علیحدہ ہونے والے دھڑے جماعت الاحرار کی جانب سے قبول کی گئی ہے۔

پاکستانی سول اور فوجی حکام کا دعویٰ ہے کہ یہ کارروائیاں افغانستان میں محفوظ پناہ گاہوں میں چھپے شدت پسندوں نے کی ہیں۔

پاکستان کے دفتر خارجہ نے اس سلسلے میں منگل کو اسلام آباد میں افغان مشن کے نائب کو طلب کر کے کالعدم شدت پسند تنظیم جماعت الاحرار کی افغانستان میں موجود پناہ گاہوں سے پاکستان کی سرزمین پر ہونے والے حملوں پر شدید تحفظات کا اظہار بھی کیا تھا۔

پاکستانی دفتر خارجہ کی جانب سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق افغان سفارت کار سے مطالبہ کیا گیا کہ افغانستان اپنی سرزمین پر دہشت گردوں اور ان کی پناہ گاہوں، مالی معاونت کرنے والوں اور سہولت کاروں کو ختم کرنے کے لیے فوری کارروائی کرے۔

طورخم

پاک افغان سرحد کی بندش فوری طور پر نافذ العمل ہو گی اور اس کی وجہ سکیورٹی خدشات بتائی گئی ہے

پاکستانکی بّری فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے بھی جمعرات کو ایک بیان میں کہا تھا کہ دشمن ایجنسیاں خطے کے امن اور استحکام کو نقصان پہنچانے سے باز رہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ ’دہشت گرد افغانستان میں محفوظ پناہ گاہوں میں دوبارہ منظم ہونے کی کوشش کر رہے ہیں اور ہمارے معاشرے میں شک اور مایوسی پھیلانے کی کوشش کر رہے ہیں۔'

جنرل باجوہ کا یہ بھی کہنا تھا کہ ’کوششیں جاری رہیں گی کہ پاکستانی سرزمین کسی اور ملک میں کارروائیوں کے لیے استعمال نہ ہو اور ہم توقع کرتے ہیں کہ دیگر ممالک بھی اپنی سرزمین پاکستان میں کارروائیوں کے لیے استعمال نہیں ہونے دیں گے۔'

Watch Live News

پاکستان میں انسانی اسمگلروں کے خلاف مہم

21 Jul, 2017 وائس آف امریکہ اردو

بلوچستان سے تعلق رکھنے والے تجزیہ کار نظر حسین زمرد کہتے ہیں کہ جب تک بھوک، افلاس اور بے ر ... مزید

یہ جو لڑائی چل رہی ہے اس میں کوئی فاتح بن کر نہیں نکل سکتا: سعد رفیق

21 Jul, 2017 چینل24

اسلام آباد (24 نیوز): وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق نے کہا ہے کہ یہ جو لڑائی چل رہی ہے  ... مزید

مخدوم شہاب الدین نے پی پی چھوڑ کر تحریک انصاف میں شامل ہونے کا عندیہ دے دیا

20 Jul, 2017 نیو

اسلام آباد: پی پی رہنما مخدوم شہاب الدین نے تحریک انصاف میں شمولیت کا عندیہ دے دیا۔تفصیلا ... مزید

فوج ،عدلیہ آئینی حدود میں کام کر رہے ہیں کسی سازش میں شریک نہیں، خواجہ آصف

20 Jul, 2017 نیو

اسلام آباد :وزیر دفاع خواجہ آصف نے کہا ہے کہ نہ عدلیہ ان کے خلاف سازش کر رہی ہے اور نہ ہی  ... مزید

سینٹ جمہوری نظام اور آئین کی حکمرانی کا ہر حال میں تحفظ کرے گی، میاں رضا ربانی

20 Jul, 2017 نیو

اسلام آباد: چیئرمین سینٹ میاں رضا ربانی نے واضح کر دیا ہے کہ سینٹ جمہوری نظام اور آئین کی  ... مزید

انتخابی اصلاحات کا حکومتی بل مسترد کرتے ہیں ، شجاعت حسین

20 Jul, 2017 نیو

پاکستان مسلم لیگ کے صدر چودھری شجاعت حسین نے کہا ہے کہ ان کی پارٹی انتخابی اصلاحات کا حکوم ... مزید

Load More
Post Your Comments
Select Language:    
MORE ON NEWS
MORE ON HAMARIWEB