نئی حکومت اور بیرون ملک پاکستانی دونوں ہی ایک دوسرے سے توقعات لگائے بیٹھے ہیں

11 Aug, 2018 وائس آف امریکہ اردو
واشنگٹن —آئندہ چند روز میں پاکستان میں قائم ہونے والی عمران خان کی حکومت اس لحاظ سے ماضی کی حکومتوں سے مختلف ہے کہ نئی حکومت نے اپنے قیام سے قبل ہی بیرونی ملکوں میں آباد پاکستانیوں سے بہت سی توقعات وابستہ کر لیں ہیں اور اسی طرح بیرونی ملکوں میں رہنے والے پاکستانیوں کی بھی عمران خان سے بہت سی توقعات ہیں اور ان کا یہ خیال ہے کہ انہوں نے ترقی یافتہ ملکوں میں حقوق و فرائض کی ادائیگی اور ترقی کی جانب پیش رفت کا جو طریقہ کا ر دیکھا ہے، عمران کی انتظامیہ اسے اپنی ترجيحات میں پیش نظر رکھے گی اور ملک کو آگے لے کر چلے گی۔گزشتہ دنوں زندگی کے مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والے پاکستانی امریکیوں نے پروگرام ’ہر دم رواں ہے زندگی‘ میں شرکت کی اور کہا کہ عمران کی نئی حکومت کو معیشت، توانائی، پانی اور خارجہ پالیسی کے حوالے سے بڑے چیلنجز کا سامنا ہے اور ان کے لیے اس سے بھی بڑا چیلنج ان توقعات کو پورا کرنا ہےجو ملک کے اندر اور باہر پاکستانیوں نے ان سے باندھ رکھی ہیں۔
 

Watch Live News

 مزید خبریں 
« مزید خبریں
Post Your Comments
Select Language: