اے بارشو نہ برسو اتنا کہ جل رہا ہے کوئی کچھ تو خیال کرو

Poet:
By: tooba, khi

اے بارشو نہ برسو اتنا کہ جل رہا ہے کوئی کچھ تو خیال کرو
دَرد کے بِستر پہ پڑا ہوں کچا ہے میرا مُکاں کچھ تو خیال کرو

کیا بتاؤں زہر سی لگتی ہے تیری چھنکار مجھے اے بارش
کوئی سِسک رہا ہے تم بَرس رہے ہو کچھ تو خیال کرو

میو کَش ہوں کس میں ہے زمانہ بھی باخبر اس سے
میرے آنگن میں نہیں گنجیش غَم کی کچھ تو خیال کرو

تھا وقت کہ انتظار رہا کرتا تھا یہ اس سوہانے موسم کا
اب ٹوٹ سا جاتا ہوں یہ توڑ دیتا ہے کچھ تو خیال کرو

ورق ورق رُولاتا ہے مجھے میرے لکھے افسانے کا نفیس
لوٹ آو نہ کسی شب یا میرے مرنے کی تم دعا کرو
 

Rate it:
Views: 51

More Rain/Barish Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

Email
05 Jun, 2018
About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City