منہ پہ طعنے مار گیا میری کرامات کے

Poet: Sobiya Anmol
By: sobiya Anmol, Lahore

منہ پہ طعنے مار گیا میری کرامات کے
ہم بدنام ہوئے پیچھے اِسی بات کے

اوقات یہ نکلی کہ ہم ہار گئے
بڑے دعوے کرتے تھے اپنی اوقات کے

اب یہ عالم ہے میری مایوسیوں کا
شوق سے دیکھتی ہوں نظارے کائنات کے

تاریکیوں میں پڑے ہی کٹے گی اب
خواب چھوڑ دئیے ہیں چمکتی بارات کے

بڑے بدنما سے مشورے دیتے ہیں مجھے
یہ کالے گھنگھور سے اندھیرے رات کے

ایاغِ چین پی لو ٗ مجھ سے موت لے لو
یہی پکارتے ہیں ہر پل سائے حیات کے

غلغلۂ محشر لگا رہتا ہے تخیّل میں میرے
حالات دیکھتی رہتی ہوں میں حالات کے

Rate it:
29 Oct, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: sobiya Anmol
what can I say,people can tell about me... View More
Visit 128 Other Poetries by sobiya Anmol »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City