ستم زندگی کے پیہم اُٹھائے جا رہے ہیں

Poet: عبداللہ مہدی
By: عبداللہ مہدی, Gujrat, Pakistan

ستم زندگی کے پیہم اُٹھائے جا رہے ہیں
بندے خدا کے ہیں، سو رولائے جا رہے ہیں

جب کھیل ہی سارا مشیت کا ہے تو
ہمیں خواب ہی کیوں دیکھائے جا رہے ہیں

اس کی گلی سے جو بھی گزرتے ہیں
گیت وہ اس کے ہی گائے جا رہے ہیں

ان کی آخری دید ہو گی یہ جان کر
کچھ الگ سے آج وہ سجائے جا رہے ہیں

آرزوئیں کم نہ ہوں گی جان کر بھی
ہم یوں ہی اپنا جی جلائے جا رہے ہیں

Rate it:
13 Nov, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: عبداللہ مہدی
Visit Other Poetries by عبداللہ مہدی »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City