بے وفاؤں کے انتظار میں پڑے رہے

Poet: Sobiya Anmol
By: Sobiya Anmol, Lahore

بے وفاؤں کے انتظار میں پڑے رہے
صدیوں پرانے پیار میں پڑے رہے

فرد نہ سچا کوئی ہم میں آیا
دل ہم میں ٗ ہم دلِ بیزار میں پڑے رہے

صبر و تحمل سے کام عمر بھر لیا
مر گئے تو سایۂ دیوار میں پڑے رہے

عہدِ وفا تھا رکاوٹِ ترکِ محبت
نہ پوچھو کہ کیوں ہم بےکار پڑے رہے

چُھوٹے نہ اُس کی فریبی محبت سے
کرتے ہی گئے ٗ گنہگار پڑے رہے

وہ کرشمے جفاؤں کے سرِ عام کرتا رہا
ہم انائے محبت میں وفادار پڑے رہے

لمحہ لمحہ میرے بے زبان عشق کے
قفسِ بدن میں گرفتار پڑے رہے

Rate it:
15 Nov, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: sobiya Anmol
what can I say,people can tell about me... View More
Visit 128 Other Poetries by sobiya Anmol »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City