اداس لوگو ادھر تو آو ہمیں بتاو

Poet: Salahuddin Baloch
By: Salahuddin Baloch, Quetta

اداس لوگو ادھر تو آؤ ہمیں بتاؤ
کہاں کہاں پر ملے ہیں گھاؤ ہمیں بتاؤ

سفر میں درپیش مشکلوں کا بھی تذکرہ ہو
یہ داستانِ الم سناؤ ہمیں بتاؤ

سفر کے آغاز میں بھی انجام کا علم ہو
ابھی محبت نہ آزماؤ ہمیں بتاؤ

سپاہیانِ وفا چلے ہیں بڑے سفر پر
ہے کس جگہ پر ابھی پڑاؤ ہمیں بتاؤ

مجھے خبر ہے کوئی بھی مرہم نہیں کرے گا
بس اک صدا ہے ہمیں بتاؤ ہمیں بتاؤ

Rate it:
26 May, 2019

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Salahuddin Baloch
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City