دل کہتا ہے

Poet: حازق علی
By: Hazik Ali, Multan

تا عمر مٹھی بھر چیز نے ٹکنے نہیں دیا
ہاں وہی جسے یہ زمانہ وقت دل کہتا ہے

کیٔ جگہوں پر کم بخت نے شرمندہ کیا
میں جو کہوں جانے کا تو یہ مل کہتا ہے

درد بھرتے ریے دامن میں سامنے اسکے
اگر میں رونا چاہوں تو یہ کِھل کہتا ہے

لینا دینا نہیں، محبت سے دور دور تک
بس کوئی بھا جائے تو اسے دل کہتا ہے

کردار بہت رہا اسکا زندگی میں حازق
میں زخم دیکھتا ہوں تو یہ سِل کہتا ہے
 

Rate it:
09 Sep, 2019

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Hazik Ali
Visit Other Poetries by Hazik Ali »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City