بیکار مباش کچھ کیا کر

(Muhammad Mustafa Raza, Karachi)
برطانوی کمپنی براڈ شیٹ کے سی ای او اوکاوے موساوی کے انٹرویو کے حوالے سے دیکھ لیں کہ کس طرح چائے کے پیالی میں طوفان اٹھانے کی ناکام کوشش کی گئی ہے

بیکار مباش کچھ کیا کر براڈ شیٹ نامی کمپنی کاقیام 2000 میں عمل میں آیا اس کمپنی کی وجہ شہرت اسکاغیر معمولی دعویٰ بنی . دعویٰ کچھ اس قسم کاتھا کہ اپنی حکومتوں سےجورقوم چھپا کر غیرملکی بینکوں میںجمع کرائی جاتی ہےبراڈ شیٹ اس کا سراغ لگا سکتی ہے۔ نیز خریدی جائیدادوں کی نشان دہی بھی کر سکتی ہےمثل مشہورہےاندھا کیا چاہے دو آنکھیں اکتوبر1999ء میں جنرل مشرف نے حکومت میں آنےکےبعدجوسات نکاتی ایجنڈا پیش کیاتھااُس میںسرفہرست کرپشن کا خاتمہ تھا۔ 2000 میں براڈ شیٹ کو جنرل مشرف نے پاکستان کے سیاست دانوں کے اثاثوں کا سراغ لگانےکی ذمہ داری سونپی اس دوران کمپنی نے سیاستدانوں کے اثاثوں کا کھوج لگایا مگر جنرل مشرف کی حکومت نے جب ان سیاست دانوں کو اپنی حکومت کا حصہ بنا لیا نیب نے براڈ شیٹ کو خط لکھا کہ ان سیاست دانوں کے خلاف تحقیقات روک دی جائیں.کچھ وقت گزرنے کے بعد حکومت پاکستان نے کمپنی سے معاہدہ منسوخ کر دیانتیجتاً کمپنی اس فیصلے کے خلاف عدالت میں چلی گئی

چند روز پیشتر جب برطانیہ کی عدالت نے براڈ شیٹ کے حق میں فیصلہ دیتے ہوئے نیب پر سات ارب روپے جرمانہ عائدکیا 28ملین ڈالر کی خطیررقم بھی وصول کرلی۔ برطانوی کمپنی براڈ شیٹ کے سی ای او اوکاوے موساوی نے اپنے انٹرویو کے دوران دعوی کیاکہ پاکستانیوں کی جانب سے چھپائے ڈالر اب بھی اس کے علم میں ہیں لہذاایک بار پھر رجوع کیا جائے حسبِ توقع عمران خان نےاوکاوےموساوی کےانکشافات کا خیرمقدم کیا ہے۔حکومت نے اس حوالے سے وزرا کی ایک کمیٹی بھی بنادی ہے

ملک کی شرح نمو 5.8فیصدسے گرتےگرتے منفی ہو گئی ہےاوراس سال 7فیصدہونا تھا. آئےدن اشیائے صرف کی قیمتیں بڑھتی جارہی ہیں۔ کوئی پوچھنے والا نہیںاعلیٰ عہدوں پر براجمان کوئی شخص کسی قسم کی ذمہ داری قبول کرنے کے لئے تیار نہیں ہے سابقہ حکومتوں کی بدعنوانی اور غلط فیصلوں کے قصے ہروقت قوم کوسنانا بندکیےجانےچاہیئےاقتدار میں نصف مدت پوری کر لینے والی حکومت سے کم از کم یہ توقع تو کی جاتی ہے کہ ملک و قوم کو قومی خزانے کو ناروا بوجھ سے محفوظ رکھا جائے پاکستان پہلے ہی مسائل کے بوجھ تلے دبا ہوا ہے عمران خان حکومت نے اس بوجھ میں کئی گنا اضافہ کیا ہےبراڈ شیٹ کے سربراہ کی چکنی چپڑی باتوں کو نظر انداز کرنےمیں ہی عافیت ہے نیز تحقیقات کی جائیں کیوں کرحکومت پاکستان عوام کےٹیکسوں سے ایک غیر مُستند غیرملکی کمپنی کو خطیر رقم دینے پر مجبور ہوئی
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Muhammad Mustafa Raza
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
17 Jan, 2021 Views: 186

Comments

آپ کی رائے